Select your Top Menu from wp menus

حمزہ شہباز کو گرفتاری کرنیوالی نیب ٹیم کی خالی ہاتھ واپسی

13

لاہور (نیوز ڈیسک) : نیب نے شہباز شریف کے گھر 96 ایچ ماڈل ٹاؤن پر چھاپہ مارا، جس کے بعد اب نیب کی ٹیم وارنٹ گرفتاری ہونے کے باوجود حمزہ شہباز کو گرفتار کیے بغیر ہی روانہ ہو گئی۔ ذرائع کے مطابق نیب ٹیم ایک گھنٹے سے زائد شہباز شریف کے گھر رہی، نیب ٹیم نے ایک کاغز پر حمزہ شہباز کے دستخط کیے۔ نیب کی ٹیم کے شہباز شریف اور حمزہ شہباز سے مذاکرات بھی ہوئے۔شہباز شریف نے اسی دوران فون پر رابطے بھی کیے۔ذرائع نے بتایا کہ شہباز شریف کی رہائش گاہ پر چھاپے کے دوران نیب نے کچھ دستاویزات اپنے قبضے میں لے لیے۔ لیگی کارکنان نے حمزہ شہباز شریف کی گرفتاری اور کارسرکار میں مداخلت کی اور اہلکاروں کی گاڑیوں کو نہ صرف روکے رکھا بلکہ اہلکاروں کی وردیاں بھی پھاڑ دیںنیب ٹیم ذرائع کے مطابق حمزہ شہباز کے خلاف منی لانڈرنگ کے الزام ہیں، ان کے خلاف نیب کے پاس ثبوت موجود ہیں۔ ذرائع کے مطابق حمزہ شہباز شریف نے نیب حکام کو گرفتاری دینے سے انکار کر دیا ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ شہباز شریف کی ماڈل ٹاؤن میں واقع رہائش گاہ 96 ایچ پر چھاپہ مارا گیا ۔ چھاپے کے وقت شہبازشریف اور حمزہ شہباز بھی رہائش گاہ پر موجود تھے۔شہباز شریف کے گھر پر چھاپہ اور حمزہ شہباز کے وارنٹ گرفتاری ہونے پر رد عمل دیتے ہوئے ترجمان وزیراعلیٰ پنجاب شہباز گل نے کہا کہ نیب آزاد ادارہ ہے، نیب پنجاب یا مرکزی حکومت کے ماتحت نہیں، نیب کیسز میں ضمانتیں بھی شریف فیملی کو ہی مل رہی ہیں، دوسرے کسی رہنما یا جماعت کو کیوں نہیں مل رہی ؟ انہوں نے کہا حمزہ شہباز کی زندگی کو خطرہ ہوتا تو حکومت پنجاب تحفظ دیتی، اسی طرح اگر نیب کی ٹیم کو خطرہ ہوگا تب بھی حکومت پنجاب تحفظ دے گی۔ چھاپے کے دوران گھر کے اندر سے تمام اسٹاف اور گارڈز کو باہر نکال دیا گیا۔

About The Author

Related posts